Posted by: Bagewafa | دسمبر 7, 2011

پتھّر نہِیں مِلا_ مُحمّدعلی وفا

پتھّر نہِیں مِلا_ مُحمّدعلی وفا

 

 سر تومیرا  موجوُد تھا پتھّر نہِیں مِلا، 

 ظالِم کو بیاںباں میں خنجر نہِیں مِلا۔ 

 

مجبُور کو سب راسْتےجنگل میں لے گۓ 

 منزِل تلک جانیکو رہبر نہی مِلا۔

 

 کانٹو کی فصل کاٹنے میں لگ گۓ آقل، 

 گُلشن میں، اُنکو پھُولکا گھر نہِیں مِلا۔ 

 

جھانکا کبھی ہمنے تُمھاری آنکھمیں، 

 نفرت مِیلی پْیارکا ساگر نہِیں مِلا 

 

ساقی اب تو ٹھِیک ہَے بندھ ہو یے مَیخانے، 

 تِشنہ لبی تھی کوئی چاراگر نہی مِلا۔

Advertisements

زمرے

%d bloggers like this: