Posted by: Bagewafa | اکتوبر 8, 2013

تمھیں یاد ہو ہو کہ نہ یاد ہو – مومن خاں مومن

تمھیں یاد ہو ہو کہ نہ یاد ہو – مومن خاں مومن

 

        وہ جو ہم میں تم میں قرار تھا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

        وہی یعنی وعدہ نباہ کا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

 

        وہ جو لطف مجھ پہ تھے پیش تر، وہ کرم کہ تھا میرے حال پر

        مجھے سب یاد ہے ذرا ذرا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

 

        کبھی بیٹھے جو سب میں روبرو ، تو اشاروں ہی میں گفتگو

        وہ بیان شوق کا برملا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

 

        ہوئے اتفاق سے گر بہم ، تو وفا جتانے کو دم بہ دم

        گلہ ملامتِ اقرباء ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

 

        کوئی ایسی بات ہوئی اگر کہ تمہارے جی کو بری لگی

        تو بیاں سے پہلے ہی بھولنا ،تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

 

        کبھی ہم میں تم میں بھی چاہ تھی ، کبھی ہم میں تم میں بھی راہ تھی

        کبھی ہم بھی تم بھی تھے آشنا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

 

        جسے آپ گنتے تھے آشنا ، جسے آپ کہتے تھے باوفا

        میں وہی ہوں مومنِ مبتلا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

 

Advertisements

زمرے

%d bloggers like this: