Posted by: Bagewafa | جنوری 15, 2018

لاتا ہے مجھے رقص میں ‘ گرداب کو چُھونا۔۔۔۔۔نسرین سید

لاتا ہے مجھے رقص میں ‘ گرداب کو چُھونا۔۔۔۔۔نسرین سید

.

کام آیا مِرے خوب ، تہہِ آب کو چُھونا

 مِلتا ہے کسے، گوہرِ نایاب کو چُھونا ؟

 .

 بڑھتی ہے طلب عشق میں’ دیدار ہو جتنا

 کرتا ہے فزوں پیاس یہاں ، آب کو چُھونا

.

لاتی ہے مجھے وَجد میں’ افلاک کی گردش

 لاتا ہے مجھے رقص میں ‘ گرداب کو چُھونا

.

اسباب میسّر تھے مجھے سارے جہاں کے

 خواہش میں کہاں تھا مگر اسباب کو چُھونا

.

سپنوں کی دعا دینا ۔۔۔۔ مِری آنکھ کو ہم دم !

نرمی سے ۔۔۔ ذرا دیدہِء بے خواب کو چُھونا

.

کیا چیز تڑپ ہے’ دلِ مضطر سے نہ پوچھو

 جانو گے ‘ کبھی پارہ ء بے تاب کو چُھونا

.

اک لَمس ترا ‘ زندگی پھونکے مِرے تن میں

 چُھونا ‘ ذرا ۔۔۔۔۔ اِس ماہیء بے آب کو چُھونا

.

شب ہوتے ہی بن جاتی ہوں میں نور کا منبع

 راس آ گیا مجھ کو ‘ کسی مَہ تاب کو چُھونا

.

نسرین! مِلا جب سے ۔۔ وہ اک لَمسِ ملائم

 بھاتا ہی نہیں ‘ اطلس و کم خواب کو چُھونا

Advertisements

زمرے

%d bloggers like this: