Posted by: Bagewafa | نومبر 27, 2018

دِل کا گھر کُھلا۔۔۔ سلمان اطہر ۔

بیادِ غالب

دِل کا گھر کُھلا۔۔۔ سلمان اطہر

 

.

پردہِ ابہام سرکایا تو یہ اکثر کُھلا

وُسعتِ اِدراک سے آگے نہ کوئ در کُھلا

.

کھینچ کر رکھا بھلے ہی اِشتیاقِ آگہی

یہ وہ در ہے جو ہمیشہ جانبِ منظر کُھلا

.

جب سرابِ زِندگی سے ہو گئے مانُوس ہم

موت کی صورت میں تب اندیشہِ آخَر کُھلا

.

جب کوئ تحقیقِ نو قِرطاسِ عالم پر ہُوئ

گِرد بادِ مذہبی کا تب وہیں مِسطر کُھلا

.

ڈُگڈُگی ہے آہنی ہاتھوں میں اِستعِمار کی

ناچتا ہے شہر کی گلیوں میں اِک بندر کُھلا

.

ہے یقیں وہ لوٹ کر آۓ گا اِک دن ناگہاں

ہم نے جِس کے واسطے رکھا ہے دِل کا گھر کُھلا

.

اِمتحاں لینا اگر مقصوُد ہے ناچیز کا

لیجئے یہ میں رہا ، اب گھونپ دیں خنجر کُھلا

.

وہ رہا ہم سے گُریزاں سامنے آنے تلک

"اِس تکلف سے کہ گویا بُت کدے کا گھر کُھلا”

.

سُن رہا ہُوں چہ مگوئیاں پسِ چِلمن یہی

ہم حسینوں پر کبھی نا آج تک اطہرؔ کُھلا

(Courtesy: Facebook  Salman Athar)

 


زمرے

%d bloggers like this: