Posted by: Bagewafa | فروری 25, 2019

تصویرِ درد…..علامہ محمد اِقبال

تصویرِ درد…..علامہ محمد اِقبال

 

.

نہیں منّت کشِ تابِ شنیدن داستاں میری

خموشی گفتگو ہے، بے زبانی ہے زباں میری

.

یہ دستورِ زباں بندی ہے کیسا تیری محفل میں

یہاں تو بات کرنے کو ترستی ہے زباں میری

.

اُٹھائے کچھ وَرق لالے نے، کچھ نرگس نے، کچھ گُل نے

چمن میں ہر طرف بِکھری ہُوئی ہے داستاں میری

.

اُڑالی قُمریوں نے، طُوطیوں نے، عندلیبوں نے

چمن والوں نے مِل کر لُوٹ لی طرزِ فغاں میری

.

ٹپک اے شمع آنسو بن کے پروانے کی آنکھوں سے

سراپا درد ہوں، حسرت بھری ہے داستاں میری

.

الٰہی! پھر مزا کیا ہے یہاں دنیا میں رہنے کا

حیاتِ جاوداں میری، نہ مرگِ ناگہاں میری

.!

مرا رونا نہیں، رونا ہے یہ سارے گُلستاں کا

وہ گُل ہوں مَیں، خزاں ہر گُل کی ہے گویا خزاں میری

 

 


زمرے

%d bloggers like this: