Posted by: Bagewafa | مارچ 4, 2019

دل جل رہا تھا غم سے مگر نغمہ گر رہا۔۔۔۔۔ منیر نیازی

دل جل رہا تھا غم سے مگر نغمہ گر رہا۔۔۔۔۔ منیر نیازی

.

دل جل رہا تھا غم سے مگر نغمہ گر رہا

 جب تک رہا میں ساتھ مرے یہ ہُنر رہا

.

 صبحِ سفر کی رات تھی، تارے تھے اور ہوا

 سایہ سا ایک دیر تلک بام پر رہا

.

 میری صدا ہوا میں بہت دُور تک گئی

 پر میں بُلا رہا تھا جیسے، بے خبر رہا

.

 گزری ہے کیا مزے سے خیالوں میں زندگی

 دُوری کا یہ طلسم بڑا کارگر رہا

.

 خوف آسماں کے ساتھ تھا سر پر جھکا ہوا

 کوئی ہے بھی یا نہیں ہے، یہی دل کو ڈر رہا

.

 اُس آخری نظر میں عجب درد تھا منیر

 جانے کا اُس کے رنج مجھے عمر بھر رہا

Advertisements

زمرے

%d bloggers like this: