Posted by: Bagewafa | جولائی 18, 2019

ڈر لگتا ہے۔۔۔۔۔۔کاظم واسطی

ڈر لگتا ہے۔۔۔۔۔۔کاظم واسطی

.

دام یوسف نہ گرا دیں کہیں بازاروں میں

 دور حاضر کی خریداروں سے ڈر لگتا ہے

.

جس کو دیکھو وہ نکل پڑتا ہے بازاروں میں

 مصر کیا اب سبھی بازاروں سے ڈر لگتا ہے

.

 مار کر آنکھ وہ مشہور ہوئ ہے لڑکی

 آنکھ کے جادو سے رخساروں سے ڈر لگتا ہے

.

لوگ ڈھل جاتے ہیں کرداروں میں کیسے کیسے

 ایسے ویسے مجھے کرداروں سے ڈر لگتا ہے

.

آستینوں میں ہو خنجر تو کوئ بات نہیں

 سر پے لٹکی ہوئ تلواروں سے ڈر لگتا ہے

.

در بناتے ہیں وہی دل میں ہو وسعت جن کے

 گھر میں بڑھتی ہوئ دیواروں سے ڈر لگتا ہے

.

لوگ پاگل ہیں بٹھا لیتے ہیں سر پر اپنے

 آتی جاتی سبھی سرکاروں سے در لگتاہے


زمرے

%d bloggers like this: